مسئلہ کشمیر اور ریاست مدینہ ثانی

جب صلح حدیبیہ ہوئی تو اس میں طے ہوا تھا کہ قبائل متحدہ کو اختیار ہے کہ جس کے معاہدہ اور صلح میں شریک ہونا چاہیں شریک ہو جائیں۔ چنانچہ بنو خزاعہ مسلمانوں کے عہد میں شریک ہو کر مسلمانوں کے اتحادی بن گئے۔ مکہ میں بنو خزاعہ پر شب خون مارا گیا جسکی فریاد لے کر بنو خزاعہ کا ایک وفد مدینہ منورہ بارگاہ نبوی صلی اللہ علیہ وسلم میں حاضر ہوا۔ یہی وہ واقعہ جسکی بنا پر صلح حدیبیہ کا معاہدہ ٹوٹا اور حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کم و بیش دس ہزار قدسیوں کی جمعیت ہمراہ لے کر مدینہ منورہ سے بقصد فتح مکہ مکرمہ کی طرف روانہ ہوئے۔
ہماری لیڈرشپ نے کشمیر کے حوالے سے حالیہ واقعات پر سیاست تو بہت کی مگر کسی نے یہ نہیں بتایا کہ وہ حکمران ہوتے تو کیا کرتے۔ کل مجھ سے ایک صاحب نے سوال کیا کہ میں حاکم وقت ہوتا تو کیا کرتا تو میرا جواب یہ تھا کہ اگر میں آج ایسی کسی پوزیشن میں ہوتا تو وہی کرتا جو ہمارے پیارے نبی پاک صلی اللہ علیہ وسلم نے بنو خزاعہ والے واقعہ پر کیا۔

کافر ہے تو شمشیر پہ کرتا ہے بھروسہ
مومن ہے تو بے تیغ بھی لڑتا ہے سپاہی

جو لوگ کشمیر کے معاملے پر کہہ رہے ہیں “کیا حملہ کر دیں؟”
وہ حضرات کلام اللہ قرآن پاک کی اس آیت پر غور کر لیں۔

4: سورة النساء
آیت: 75
ترجمہ:
اور ( اے مسلمانو ! ) تمہارے پاس کیا جواز ہے کہ اللہ کے راستے میں اور ان بے بس مردوں ، عورتوں اور بچوں کی خاطر نہ لڑو جو یہ دعا کر رہے ہیں کہ ” اے ہمارے پروردگار ! ہمیں اس بستی سے نکال لایئے جس کے باشندے ظلم توڑ رہے ہیں ، اور ہمارے لیے اپنی طرف سے کوئی حامی پیدا کردیجیے ، اور ہمارے لیے اپنی طرف سے کوئی مددگار کھڑا کردیجیے “

جب امام مہدی علیه السلام تشریف لائیں گے تو کیا تب بھی ہم لوگ انکو دجال کے ساتھ جہاد کے بجائے مذاکرات کا درس دیں گے؟ کیا غزوہ ہند کے وقت بھی ایٹمی جنگ کے خطرے کے بہانے تراشے جائیں گے؟

70 سال سے دنیا کے منصف کہاں تھے؟ جب افغانستان، عراق، لیبیا، شام،چیچنیا، برما، فلسطین اور کشمیر پر مظالم ڈھائے جائیں تو انکا رویہ کیسا ہوتا ہے اور جب سوڈان میں عیسائیوں کا الگ ملک بنانا ہو یا یہودیوں کو فلسطین میں لاکر قابض بنانا ہو تو انکا رویہ کیسا ہوتا ہے؟ کیا ہم اپنی قوت ایمانی کے بجائے آج ان پر بھروسہ کریں گے کہ وہ کشمیریوں کو انصاف دلائیں گے، وہ بھی بنا ہماری سنجیدہ کوششوں کے؟

Musnad Ahmed Hadees # 9117
ترجمہ:
سیدنانعمان بن بشیر ‌رضی ‌اللہ ‌عنہ سے یہ بھی مروی ہے کہ نبی کریم ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم نے فرمایا: سارے مومن ایک آدمی کی مانند ہیں، جب اس کا سر تکلیف میں ہوتا ہے تو سارا جسم تکلیف میں پڑ جاتا ہے اور جب اس کی آنکھ دکھتی ہے تو سارے کا سارا جسم دکھنے لگتا ہے۔ Sahih Hadees

ہمارے حکمران کہہ رہے ہیں کہ جب پاکستان پر حملہ ہوا تو منہ توڑ جواب دیں گے تو کیا مقبوضہ کشمیر کے عوام پاکستانی نہیں ہیں؟ میں تو کہتا ہوں اصل پاکستانی وہی ہیں جو پاکستان کا جھنڈا لے کر نکلتے ہیں، گولی لگتی ہے گرتے ہیں، پھر پاکستان کا جھنڈا لے کر کھڑے ہو جاتے ہیں، شہید ہوتے ہیں تو پاکستان کے جھنڈے کا کفن پہنایا جاتا ہے اور قبر پر بھی پاکستان ہی کا پرچم لہرایا جاتا ہے۔

اور کیا وفاداری کا ثبوت دیں تجھے،
لپٹ کر تیرے پرچم سے جان دی ہے۔۔۔!!!

بھارت اور پاکستان کی زمینیں ایک جیسی ہیں مگر دونوں میں جس چیز کا فرق ہے وہ کفر اور اسلام کا ہے اور یہی دو قومی نظریہ ہے جس کی بنا پر پاکستان وجود میں آیا، کشمیری جس وجہ سے کشمیر بنے گا پاکستان اور ہم پاکستانی ہیں پاکستان ہمارا ہے کا نعرہ لگاتے ہیں وہ صرف اسلام ہے۔ آئیے ہم بھی مل کر انکو جواب میں بولیں “ہم مسلمان ہیں، کشمیر ہمارا ہے”

ہمیں اپنے حکمرانوں اور لیڈرشپ کو کشمیر کے معاملے پر کشمیریوں کے ساتھ کھڑا ہونے پر مجبور کرنا ہوگا اور ایسا صرف عوامی پریشر سے ہو گا مگر اسکے لیے ضروری ہے کہ ہم انکی سیاست کیلئے انکا کھلونا بن کر انکا دفاع مت کریں بلکہ انکی کشمیر کے حوالے سے سستیوں اور بزدلیوں کے متعلق انکو آڑے ہاتھوں لیں اور کشمیر کے لیے سنجیدہ اقدامات کرنے پر مجبور کر دیں۔ آپ بیشک تعداد میں تھوڑے ہو سکتے ہیں مگر یہ قلیل لوگ بھی اگر فضائے بدر پیدا کر دیں تو ہم نہ صرف کشمیر واپس لے سکتے ہیں بلکہ صحیح معنوں میں پاکستان کو اسلام کا قلعہ بنا سکتے ہیں۔

فضائے بدر پیدا کر، فرشتے تیری نصرت کو۔۔۔ 
اتر سکتے ہیں گردوں سے قطار اندر قطار اب بھی۔۔۔!!!

اپنا تبصرہ بھیجیں